Download Udas Naslain PDF Urdu novel by Abdullah Hussain. You can find the links on this page.

First published in 1963. A masterpiece of realistic fiction, Udas Naslain is one of the Urdu novels, which continuously attracting the readers, even after a long period of its publication.

Udas Naslain Novel PDF Download or Read Online by Abdullah Hussain
Udas Naslain novel PDF

The author Abdullah Hussain wrote it brilliantly and the way he creates a scene is really admirable. You will enjoy the conversations between its characters. In addition, there are a lot of magnificent moments and amazing scenes that you will love to read more than once.

However, it is still a depressing read. It portrays the real characteristic of human nature. You will also see the bitter realities of life as well. The plot describes various aspects of a generation and a reader can learn about the feudal system of the British India.

Let’s read what the author Abdullah Hussain says about his novel Udas Naslain

He says in the introductory page of Udas Naslain PDF: “Every author and poet, writes for his fellow generation. It never happened that an author takes a pen and says that he is going to create literature for the next generations. However, if an upcoming generation that is coming after his own generation, also reads his literary works as keenly and feels itself as connected with it, then this is like a bonus for that author.

And the author, who is just like a pen labor, feels the same happiness that a labor feels when he gets a one month extra salary on the occasion of Eid. And he still thankful for this despite that it was not a donation, but it was his right”.

Also download:

Shahab Nama by Qudratullah Shahab

An excerpt from this novel in Urdu language

You can also read below an excerpt from Udas Naslain PDF novel.

یکایک گلی میں شور اٹھا اور چند لمحوں کے اندر شور قیامت معلوم ہونے لگا. پھر روشن علی خان کے گھر کا دروازہ دھڑا دھڑ کوٹا جانے لگا. گھر کے مالک نے کھڑکی سے جھانک کر دیکھا تو ہندوستانی سپاہیوں کی ننگی تلواریں اور برچھیوں کے پھل مشعلوں کی روشنی میں چمکتے نظر آئے. گلی میں ہر طرف ہاہا کار مچی تھی. اور سر ہی سر نظر آتے تھے. تھوڑی دیر تک اندر سے کوئی جواب نہ ملا تو باغیوں نے دروازہ توڑنے کا فیصلہ کیا۔

اول اول تو محلے کے لوگ گھروں میں دبکے بیٹھے رہے کہ جانے کس کی موت آئی ہے. پھر جب بات کھل گئی کہ اس غیض و غضب کا رخ محض روشن علی خان کے گھر کی جانب ہے. تو چند سربراہ دبکے دبکائے نکلے اور کسی نہ کسی طور اس دروازے تک پہنچے جس کے توڑے جانے کی تجویزیں ہو رہی تھیں۔

You might also like:

Zavia by Ashfaq Ahmed

وہاں پر انہیں جو بتایا گیا وہ یوں تھا: کرنل جانسن، چھاونی کے کمانڈنگ افسر، بھیس بدل کر گھیرے میں سے بچ نکلے ہیں. اور دلی پہنچنا چاہتے ہیں. رستے میں چند سپاہیوں سے ان کی مڈبھیڑ بھی ہوئی. لیکن وہ ان میں سے تین کو موت کی نیند سلا کر اور خود تلوار کا زخم کھا کر نکل آئے ہیں. اب ان کے خون کی لکیر اس دروازے میں داخل ہوتی ہے. انہیں ہمارے حوالے کیا جائے. ورنہ دروازہ توڑ کر گھر کے مکینوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا جائے گا۔

محلے کے سربراہوں نے، کہ خود خوفزدہ تھے. ہر قسم کی مدد کا وعدہ کیا اور باغیوں کے ٖغصے کو فی الوقت ٹھنڈا کر کے کسی نہ کسی راستے سے مکان میں داخل ہوئے. اب ہر ایک سربراہ اپنی اپنی پگڑی اتار کر روشن علی خان کے پیروں پہ رکھ رہا ہے. منتیں کر رہا ہے، دھمکیاں اور گھرکیاں دے رہا ہے. پر ہمت کا دھنی روشن علی خان اپنے اٹل فیصلے پر قائم ہے. کہ جان جاتی ہے تو چلی جائے پر زخمی مہمان کو دشمنوں کے حوالے نہ کروں گا۔

Udas Naslain PDF link

Udas Naslain novel PDF || Download

Leave a Reply